کیا کبھی برگد کے درخت بھی تھکتے ہیں؟
کیا کبھی وقت کے پاؤں بھی تھمتے ہیں؟

کیا کبھی ماں کی آغوش بھی تنگ ہوتی ہے ؟
کیا کبھی محبت بھی سرد ہوتی ہے؟

کیا کبهی رابطے بھی منقطع ہوتے ہیں؟
یا صرف دوسری هیئت میں منتقل ہوجاتے ہیں۔۔۔؟

حفصہ صدیقی

“Shaam”

Ajj phir
Woh khamosh sham hai
Raat ki tareeki mein
Subah ka Intezar hai
Lamhey badaltey hein
Deepp dil mein jaltey hein
Kubb woh garrhi ayyee gi
Jubb dil ki kahani
Lafzon se waa’ hogi
Shayad ussey fikr hi nahi
Shayad ussey Khabarr hi nahi.
Saa’aton ka guzarna
Kitna mushkil hota hai
Jubb koi dil mein chupa hota hai.

Dr Hafsa Siddiqui.textgram_1490680203

درد کے سمندر میں۔۔۔

images (61)

درد کے سمندر میں۔۔۔

بےسکونی میں
درد نہیں ہوتا ہے
کرب کے منازل
گزرتے ہیں۔
ٹیسوں کے چہرے
موجوں کی طرح
ڈوبتے ابھرتے ہیں۔
درد کے سمندر میں
کتنے نفوس رہتے ہیں ۔
پانی کی سطح پہ
دھوپ میں پرکھو تو
کچھ آگاہی ہو
درد کے سمندر میں
کتنے نفوس رہتے ہیں۔

حفصہ صدیقی